Home / خبریں / ایم زیڈ کنولؔ ۔۔لاہور

ایم زیڈ کنولؔ ۔۔لاہور

برف کا آتِش فشاں کہنے لگا

پارۂ دل کو مکاں کہنے لگا
دھڑکنوں کی خامشی سے پوچھ لو
کیا تخیل سے گُُماں کہنے لگا
گُلبنوں کے خار میں ہر گُلبدن
تِتِلِیوں کو جانِ جاں کہنے لگا
توڑ ڈالو سب رِوایا تِ کُہن
آندھیوں کا سائباں کہنے لگا
میرے دم سے ہی بہارِ زیست ہے
زرد پتوں کا دھواں کہنے لگا
بُت کدے کا مان رکھوں کِس طرح
امن کا دارُالاماں کہنے لگا
میں نہ مانوں گا کِسی تقدیر کو
ہمتو ں کا آسماں کہنے لگا
گردشِ دوراں کو کرنا ہے رواں
بے بسی کا امتحا ں کہنے لگا
میرے ہاتھوں میں ہے خوشبو کا پتہ
خار زاروں کا جہاں کہنے لگا
درد کے گِرداب میں گھِِِر کے بھنور
ساحلوں کو سائباں کہنے لگا
گُلبنوں کی ہے عطا گُلگوں قبا
خوشبوؤں کا آشیاں کہنے لگا
یہ کنولؔ ہے یا گُہر ہیں آب میں
آب زاروں کا جہاں کہنے لگا

10698404_511210752315664_1270161800884273003_n

About ڈاکٹر محمد راغب دیشمکھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top
error: Content is protected !!
Visit Us On TwitterVisit Us On Facebook