Home / خبریں / تنقیدی سوچ

تنقیدی سوچ


٭ڈاکٹروسیم انور
شعبہء اردو فارسی
ڈاکٹر ہری سنگھ گور یونی ورسٹی ، ساگر ایم پی

غور و فکر کی صلاحیت کی بنا پر انسان دوسرے جانداروں سے افضل ہے ۔کسی بھی مسئلے کا حل تلاش کرنا اس کی فطرت میں شامل ہے۔انسان کادماغ وہ حصہ ہے جو کسی مسئلے کی سنگینی کا اندازہ کرتے ہی غور و فکر کرنے کے بعد اس کا منطقی حل پیش کرتا ہے۔ دماغ کا ایک اور حصہ جو بہت تیز ہے اور خود بخود کام کرتا ہے، وہ ہمارے ہر کام، سوچنے یا ماننے میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے۔ بیشتر ہمارا تیز اور بدیہی ذہن ہمارے روزمرہ کے فیصلے کرتا ہے۔ لیکن مشکل اس وقت پیدا ہوتی ہے جب بدیہی ذہن ہمارے منطقی نظام پر حاوی ہو کر غلطیاں کرتا ہے۔ ویسے ہماری آرزوئیںاور خواہشیں اور ہماری توقعات ہمیشہ منطق پر مبنی نہیں ہوتی ہیں۔پروفیسر ڈینیل کاہن مین اور پروفیسر اموس ٹورسکے کے مطابق’’ انسان میں دو نظام فکر کام کرتے ہیں۔‘‘(۱) بدیہی یا فطری سوچ (۲)تنقیدی سوچ
بدیہی اورتنقیدی سوچ کے مابین اہم فرق رفتار ہے۔ عام سوچ بہت تیز ہوتی ہے، اگرچہ اس میں اپنی رائے اور فیصلوں پر سوال نہیں اٹھایا جاتا ہے، نیز اس کے فیصلے متعصبانہ اور غیر معروضی ہونے کے قوی امکان ہیں۔ تنقیدی سوچ میںاپنے فیصلوں اور اپنی رائے کوانتہائی معروضی نقطہ نظر کے ساتھ دیکھا جاتا ہے۔ تنقیدی سوچ منطقی ، معروضی اور تعصب سے پاک ہوتی ہے۔ عام سوچ اور تنقیدی سوچ میںجبلت اور عقلیت کا فرق ہے۔ بدیہی سوچ ہماری فطرت میں شامل ہے اور تنقیدی سوچ ایک قابل حصول مہارت ہے جو کوئی بھی اس کو کافی مشق کے ساتھ تیار کرسکتا ہے۔ تنقیدی سوچ خیالات کے مابین منطقی رابطے کو سمجھنے اور عقلی انداز میں سوچنے کی صلاحیت ہے۔ تنقیدی سوچ تشخیص یا جبلت کی بجائے مسائل کو منظم طریقے سے شناخت، تجزیہ اور حل کرنے میں ممد و معاون ہوتی ہے۔ تنقیدی مفکرین خیالات اور مفروضوں پر سختی سے سوال کرتے ہیں اور استدلال کرنے کی اپنی صلاحیت کو بروئے کار لاتے ہوئے نتائج اخذ کرتے ہیں۔ افلاطون اور سقراط جیسے ابتدائی یونانی فلاسفروں کے زمانے سے ہی تنقیدی سوچ کافی بحث و مباحثے کا موضوع رہی ہے اور جدید دور میں بھی اس کا چرچا رہا ہے۔
تنقیدی سوچ کیا ہے؟
’’تنقیدی سوچ کسی فیصلے کی تشکیل کے لئے کسی مسئلے کا مقصدی تجزیہ اور جائزہ ہے۔‘‘تنقیدی سوچ ایک ایسا عمل ہے جس میں شواہدکی روشنی میں تمام پہلوؤں کا استدلالی انداز میں تجزیہ کرتے ہوئے کھلے ذہن کے ساتھ کسی مسئلے کا حل تلاش کیا جاتا ہے۔عمومی اور خاص طور پر ذاتی ترقی میںتنقیدی طور پر سوچنے کی صلاحیت انتہائی ضروری ہے۔ تنقیدی سوچ کے بغیر، کوئی شخص تخلیقی، مذہبی، سیاسی اور کسی بھی دوسری ترجیحات میںترقی نہیں کر سکتا ہے۔ عظیم فرانسیسی فلسفی اور ریاضی دان رینی ڈسکارٹس کا ماننا تھا کہ صرف اصول ’’ہر شے پر شبہ‘‘، (جو حقیقت میں تنقیدی سوچ کا فارمولا ہے)، دنیا کو سمجھنے میں ہماری مدد کرنے کے قابل ہے۔
تنقیدی سوچ ایک فیصلہ کن نظام ہے جو چیزوں اور واقعات کا تجزیہ کرنے کے لئے مستند نتیجہ اخذ کرنے میں استعمال ہوتا ہے۔ تنقیدی سوچ آپ کو مناسب تشخیص کرنے، وضاحت کرنے ، حالات اور مسائل کے نتائج کو صحیح طریقے سے استعمال کرنے کے ہنر سے رو بہ رو کراتی ہے۔ تنقیدی سوچ غور و فکر کا ایک ایسا طریقہ ہے جس میں فرد کسی بھی معلومات اور حتی کہ اپنے عقائد پر بھی سوال اٹھاتا ہے۔ بے شک، عدم اعتماد اور شکوک و شبہات تنقیدی سوچ کا لازمی جزو ہیں، لیکن یہ اس کا جوہر نہیں ہے۔ تنقیدی استدلال کے سخت استدلال اور فیصلہ سازی میں مستقل مزاجی کے ساتھ جذبات پر قابوہوتا ہے۔ ایک تنقیدی سوچ رکھنے والا شخص کبھی بھی آنکھیں بند کر کے احکامات کی پابندی نہیں کرتا ہے اور نہ ہی کسی پروپیگنڈا کا شکار ہوگا۔ دھوکہ دینا یا غلط برتاؤ کرنا بھی مشکل ہے۔ وہ ایمان پر کچھ نہیں لیتا، بلکہ اپنے عقائد، علم اور اپنے اعمال میں تجربہ اور تجزیہ سے رہنمائی حاصل کرتا ہے۔ نتیجے کے طور پر، غلطی کرنے کے امکان نسبت بہت کم ہوتے ہیں۔
تنقیدی سوچ کی ترقی:
جدید معاشرے میں تنقیدی سوچ پر اکثر تنقید کی جاتی ہے ۔جو شخص تنقیدی سوچ کا حامل نہیں ہے وہ کسی بھی فریب یا دھوکہ دہی کا ایک ممکنہ شکار ہے، کیونکہ وہ کسی بیرونی دباؤ کا مقابلہ کرنے کے قابل نہیں ہوتا ہے۔یہ سمجھنا ضروری ہے کہ تنقیدی سوچ موروثی نہیں ہوتی ہے۔ اس کی نشوونما ہوسکتی ہے اور ترقی ہوسکتی ہے، یا خراب ہوسکتی ہے۔ لہذا، جو لوگ جان بوجھ کر تنقیدی سوچ کو مسترد کرتے ہیں ان میں اعلی روحانیت کے مقابلے میں فکری زوال کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔ روحانیت، ان کی تفہیم کے مطابق، بے اعتقادی اور بلاشبہ کسی کی بھی اطاعت کرنے والی رسومات کو پیش کرنا، کبھی کبھی انتہائی قابل اعتراض ہوتی ہے۔ تنقیدی سوچ معلومات کا تجزیہ کرنے کا عمل ہے جو انتہائی ترقی یافتہ افراد کے لئے مخصوص ہے۔
تنقیدی سوچ کی تکنیکیں:
یہاں تنقیدی سوچ کی اہم تکنیکوں کا مختصرتعارف پیش کیا جانا ضروری ہے جوتنقیدی سوچ کوسمجھنے اور اسے استعمال کرنے میں مدد فراہم کرے گا۔
خود تنقید:
تنقیدی سوچ کا ایک بنیادی عنصر خود تنقید ہے۔ یہ تب ہوتا ہے جب کوئی شخص اپنے حقیقی امکانات کو سنجیدگی سے دیکھتا ہے اور، اگر ضروری ہو تو، اپنی غلطیوں کو دور کرتا ہے۔خود پر تنقید صرف ذہنی مریضوں کو چھوڑ کر سبھی میں پائی جاتی ہے۔ یہ سمجھنا ضروری ہے کہ خود تنقید کے بغیر، نظریاتی طور پر، ذاتی ترقی ناممکن ہے۔ یہی وجہ ہے کہ خود کو باہر سے دیکھنا اور اپنے خیالات اور افعال کا معقول انداز میں جائزہ لینا ضروری ہے۔اس لحاظ سے خود تنقید دماغ کی پراپرٹی کے طور پر ترقی کر سکتی ہے۔ لہذا، اگر کسی فرد کو اس واقعہ کی اہمیت کا احساس ہوجاتا ہے، تو وہ کسی بھی وقت اس مسئلے سے نمٹنے کا کام شروع کرسکتا ہے۔
اعتراف:
یہ تصور خود کو جاننے کے سوا اورکچھ نہیں ہے۔ اس سے نہ صرف کسی شخص کی ذاتی استدلال کا خدشہ ہے، بلکہ خود کو بھی اپنی طرف سے دیکھنے کی صلاحیت ہے۔
اس معاملے میں، ایک ریاست اہم کردار ادا کرتی ہے جس میں ایک شخص فیصلہ کرتا ہے: مثال کے طور پر، جذبہ حرارت میں، آپ انتہائی پاگل حرکتیں کرسکتے ہیں، اور پرسکون اور پرامن حالت میں رہتے ہوئے، آپ دانشمندی اور احتیاط سے کام کرتے ہیں۔
کٹوتی:
شرلک ہومز کا نام نہاد طریقہ تعارف کے ساتھ اچھا کام کرتا ہے۔ فیصلہ ان تمام حقائق کی مکمل جانچ پڑتال کے بعد ہی لیا جانا چاہئے جو کسی بھی فیصلے کو آگے بڑھاتے ہیں۔کٹوتی سوچنے کا ایک طریقہ ہے جس کے نتیجے میں منطقی انجام ہوتا ہے جس میں عام سے ذاتی نتیجہ اخذ کیا جاتا ہے۔ یہ دلائل کا ایک سلسلہ ہے، جہاں تمام روابط ایک منطقی انجام سے منسلک ہوتے ہیں۔
معلومات کے ذرائع کی تصدیق:
زندگی کے ہر قدم پر فیصلہ درکار ہے، ہم مستقل طور پر کچھ فیصلے کرتے ہیں ہم جو دیکھتے، سنتے یاپڑھتے ہیں۔ تاہم، کیا معلومات کا کوئی ذریعہ درست ہے؟ کیا مصنف کے ذریعہ پیش کیا گیا بیان حادثاتی یا جان بوجھ کر مسخ ہونے کا خطرہ ہے؟ ایسے سوالات کے جوابات دینا آسان نہیں ہے، لیکن ایسا کرنا ضروری ہے۔ معلومات کے زیادہ مستند ذریعہ اور تجرباتی طور پردونوںطرح سے جانچا جاسکتا ہے۔ یقینا، جانچ کسی کے اپنے تجربے پر زیادہ قابل اعتماد ہے، لیکن عملی طور پر یہ خطرناک یا ناممکن بھی ہوسکتا ہے۔
نتائج دیکھیں:
اخذ کردہ نتائج دوبارہ ہونے کے جواز ہیں، خاص طور پر اگر وہ کچھ رسمی منطق پر مبنی ہوں۔ اگر آپ کے ذریعے آ نے والاپہلا یا دوسرا نتیجہ درست تھا تو، اس کا لازمی طور پر مطلب یہ نہیں ہے کہ یہ دوسرے حالات میں بھی درست ہوگا۔
ہر ممکنہ حل کا تجزیہ :
تنقیدی سوچ کو فروغ دینے کے ، مسئلہ کو حل کرنے کے لئے ہر ممکنہ طریقوں کی فہرست بنانا مفید ہے۔ بصری نمائندگی ذہنی کام کو بہت آسان بنا دیتی ہے۔ اس لحاظ سے، مثالی معاونین کاغذ کی ایک شیٹ پر مختلف منصوبے، میزیں، اور یہاں تک کہ سادہ ڈرائنگ رکھیں گے۔ ممکنہ حل پر تبادلہ خیال کرنے کے بعد، حتمی اقدام حل کو عملی جامہ پہنانا ہے۔ مسئلے کو حل کرنے کے اکثر بہتر حل پر عمل درآمد کرنے اور یہ سمجھنے کے تنقیدی سوچ کی ضرورت ہوتی ہے کہ حل کام کر رہا ہے یا نہیں کیونکہ اس کا تعلق مقصد سے ہے۔
اہتمام:
تنقیدی سوچ پر عبور حاصل کرنے کے لئے، ایک سادہ منصوبے پر قائم رہنا ہی کافی ہے۔ اس منصوبے میں پانچ اقدامات ہیں:
۱۔تربیت
۲۔مسئلے سے واقفیت
۳۔حل کی ترقی
۴۔حتمی فیصلہ
۵۔اسکور کا نتیجہ
جو تحقیقی سرگرمیوں کے شوق رکھتے ہیں یا یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہیں ، ان میں سے بہت سے لوگ اس اسکیم سے واقف ہوں گے۔ واضح طور پر سنجیدہ منصوبہ بندی آپ کو قدم بہ قدم اور عقلی اعتبار سے انتہائی مشکل مسائل حل کرنے میںمدد گارثابت ہوتی ہے۔
سکس ڈبلیوز میتھڈ :
اپنی تنقیدی سوچ کو مرکوز کرنے کے لئے مدد گار ایک اورطریقہء کار(تکنیک) کے طور پر درج ذیل چھ بنیادی سوالوں پر غور و فکر کرنا اور ان سوالوں کے جوابات حاصل کرنے کے بعدان کا تجزیہ کرتے ہوئے نتیجہ اخذکرنا ہے۔یہ بنیادی سوال ہیں:
۱۔کس کے ذریعہ ؟
۲۔کیوں؟
۳۔کیا؟
۴۔کب؟
۵۔ہاں؟
۶۔کس کے لئے؟
کسی مسئلے کو عملی طور پر حل کرنے کے لئے تنقیدی سوچ کے اس طریقہء کار کا استعمال کیا جاتا ہے۔اور حتمی تبصرے میں نتائج پیش کئے جاتے ہیں ۔انگریزی میں اسے سکس ڈبلیوز میتھڈ (Six Ws Method) کہتے ہیں۔
تخلیقی نقطہ نظر:
تمام لوگوں میں تخلیقی جوہر موجود ہوتے ہیں، مختلف منظرنامے پیش کرنا اور اپنے مطلوبہ حالات میں ان کی صلاحیتوں کا اندازہ کرنا کوئی بہت مشکل کام نہیں ہے۔لہذا، ہم پرزور مشورہ دیتے ہیں کہ آپ پس منظر کی سوچ پر عبور حاصل کریں اور جانشینی اور اس کے طریقوں سے واقف ہوجائیں۔ ان چیزوں سے نہ صرف تنقیدی سوچ پیدا کرنے میں مدد ملے گی، بلکہ عام طور پر خود ترقی کی زمین ہموار ہو گی۔
بہتر تخلیقی استدلال:
ڈاکٹر لنڈا ایلڈر اور ڈاکٹر رچرڈ پال کا خیال ہے کہ تجربہ کار تنقیدی مفکرین غیر تنقیدی مفکرین کے مقابلے میں مضامین میں رابطے کرنے کی فطری صلاحیت رکھتے ہیں۔ یہ قابلیت انہیں صرف نئے آئیڈیاز پر انحصار کیے بغیر مسائل کے تخلیقی حل وضع کرنے اورنئے آئیڈیا میںمطابقت پانے اور ان میں سے بہترین کو منتخب کرنے یا انھیں ضروری طور پر ترمیم کرنے کے لئے ان کی تشخیص کرنے میں معاونت کرتی ہے ۔
تناؤ کو بہتر طریقے سے سنبھالیں:
فیصلہ سازی کے عمل میں جذبوں کے مقابلے میں منطقی استدلال پر انحصار کرنے کی ان کی قابلیت کے ساتھ، تنقیدی فکرمند دباؤ کے حالات دوسروں سے کہیں زیادہ بہتر طریقے سے نبھال سکتے ہیں۔ ماضی کی زندگی کے چیلنجوں کو حاصل کرنے کے لئے منطق کا استعمال ایک بہت بڑی مدد ہے، اور تنقیدی مفکرین کو ہمیشہ یہ کام کرنے میں غیرتنقیدی مفکرین کے ساتھ ایک برتری حاصل رہتی ہے۔
خوف سے آزادی:
اکثرمختلف خدشات تنقیدی سوچ پر منفی اثر ڈالتے ہیں۔ اگر آپ ان معاملات کا حل نہیں کرتے ہیں تو، تنقیدی سوچ پیدا کرنے کے آپ کے امکانات کم ہوجاتے ہیں۔ خدشات کو دور کرنے کے لئے، عظیم شخصیات کی زندگی سے متاثر کن مضامین اور کہانیاں پڑھیں۔ اس سے آپ کاحوصلہ بڑھے گا اور مسائل حل کرنے میں مدد ملے گی۔
اختتام:
تنقیدی سوچ روشن خیالی کی ایک اہم شرط ہے۔کسی بھی فکر وخیال کے اظہار کے صرف دو طریقے ممکن ہیں۔پہلا منطقی دوسرا نظریاتی۔نظریاتی انداز میں تعصب شامل ہے۔منطقی انداز غیر جانبداراور حقیقت پر مبنی ہوتا ہے۔کسی خیال یا حقیقت کو منطقی انداز میں پیش کرنایاتحریری شکل دینا تنقیدی انداز کہلاتا ہے۔تنقیدی انداز تنقیدی سوچ کے بغیر ممکن نہیں ہے۔

٭٭٭

Dr. Waseem Anwar
Assistant Professor Urdu
Dr. H. S. Gour University Sagar 470003 MP
Mobile: 9301316075
wsmnwr@gmail.com

About ڈاکٹر محمد راغب دیشمکھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top
error: Content is protected !!
Visit Us On TwitterVisit Us On Facebook