Home / Uncategorized / جبارواصف

جبارواصف

Poet - Jabbar Wasif (Rahim Yar Khan)

رنج سے یوں بر سرِ پیکار ہونا چاہئے
مسکرانے کا کوئی تہوار ہونا چاہئے
ایک پل میں کٹ نہ جائے زندگی کا یہ سفَر
راستہ تھوڑا بہت دشوار ہونا چاہئے
سوتے سوتے کٹ گئی ہے نصف سے اُوپر صدی
اب تو ہم کو نیند سے بیدار ہونا چاہئے
اپنے گھرکے آپ ہی سب سے بڑے دشمن ہیں ہم
ہم کو اپنے شَر سے ہی ہُشیار ہونا چاہئے
سربُریدہ لاش میری اب ہے سب کے سامنے
اب تو میرے قتل کا اقرار ہونا چاہئے
کب کسی مسند کے قابل ہے ہماری سادگی
صاحبِ مسند کو تو عیّار ہونا چاہئے
جو صحافی خُوں سے لکھنا چاہتے ہیں سچ یہاں
اُن کی خاطر بھی کوئی اخبار ہونا چاہئے
ناتواں ماں باپ تنہا ہو گئے تو کیا ہوا؟
نوجواں بیٹا سمُندر پار ہونا چاہئے
مجھ کو مغرب سے محبت کا کوئی شکوہ نہیں
پر ہمیں مشرق سے بھی تو پیار ہونا چاہئے
غزلوں جیسے ہوں دفاتر، نظموں جیسی کرسیاں
اور کوئی شاعرانہ کار ہونا چاہئے
کب سے لاوارث پڑی ہے جسم کی جلتی زمیں
کوئی بادل اِس کا دعویدار ہونا چاہئے
میں بھی واصفؔ شہر کے کچھ شاعروں کا پیر ہوں
مر گیا تو میرا بھی دربار ہونا چاہئے

جبارواصف

Pic - Jabbar Wasif
مرے اِدراک کا جب تُو سہارا ہی نہیں تھا
سُخن کے چاک پر لفظوں کا گارا ہی نہیں تھا
مرا خود سے بچھڑ جانا تھا بہتر میرے حق میں
کہ میرے ساتھ اب میرا گزارہ ہی نہیں تھا
نہ جانے خواب میں تو کیوں دکھائی دے رہا ہے
تری خاطر تو میرا استخارہ ہی نہیں تھا
کسی رُخ کا اُجالا مانگتا تھا میرا کمرہ
دِیّے کی لَو سے اب اِس کا گزارہ ہی نہیں تھا
دمِ رخصت مجھے تُو روکتی میں رک بھی جاتا
تری آنکھوں میں تو کوئی اشارہ ہی نہیں تھا
محبت پر مری کرتا بھروسہ چاند کیسے
مری مٹھی میں تو کوئی ستارہ ہی نہیں تھا
بس اپنے قتل سے پہلے اُسے آواز دی تھی
پھر اُس کے بعد تو میں نے پکارا ہی نہیں تھا
عطا ہوتا بھلا کیسے مجھے ساحل خوشی کا
کہ بحرِ درد کا کوئی کنارہ ہی نہیں تھا
سبھی کو فکر لاحق ہو گئی اپنے لہو کی
رخِ گلشن ابھی ہم نے نکھارا ہی نہیں تھا
ارے جس ماں کا بیٹا ظالموں نے مار ڈالا
ارے اُس ماں کا تو کوئی سہارا ہی نہیں تھا
جو بچہ بیچتا تھا رزق کی خاطر غبارے
غبارا اُس کی نظروں میں غبارا ہی نہیں تھا
خرَد مندوں کی محفل سے بھلا اُٹھتا میں کیسے
کہ رازِ عشق مجھ پر آشکارا ہی نہیں تھا
کروں واصف میں کیسے کربلا والوں کا ماتم
کہ اُن کی موت نے تو اُن کو مارا ہی نہیں تھا

About ڈاکٹر محمد راغب دیشمکھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top
error: Content is protected !!
Visit Us On TwitterVisit Us On Facebook