Home / خبریں / سائنسی طرز فکرکی اہمیت

سائنسی طرز فکرکی اہمیت


٭ڈاکٹر وسیم انور

اسسٹنٹ پروفیسر
شعبہء اردو فارسی،ڈاکٹر ہری سنگھ گور یونی ورسٹی,ساگر ایم پی 470003
wsmnwr@gmail.com

انسان ایک ترقی پذیر معاشرتی جانور ہے۔اس نے فطرت سے لڑتے ہوئے اپنا وجود قائم رکھا اور جانور سے لے کر قدیم حالت تک اور قدیم حالت سے لے کر اب تک کی شکل میں اس نے ترقی کے کئی مدارج طے کئے ہیں۔روز بہ روز پیش آنے والے مسائل سے دوچار ہوتے ہوئے اس نے اپنے علم میں اضافے کئے۔آج کا بچہ سماج میںاپنے تجربات ومشاہدات کے ذریعے ہی سیکھتا ہے جو ایک فطری عمل ہے۔چونکہ ہماری معاشرتی سوچ سائنسی طریقے سے نہیں گزری ہے،لہٰذامعاشرتی سوچ نے خاندانی ،احباب اور اساتذہ کی سوچ کو متاثر کیا ہے۔ سوچ ترقی کرتی ہے لیکن جب ہم سائنس کو جانتے ہیں تو روایتی سوچ موثر ہونے کی وجہ سے سائنس کتابوں تک محدود ہو کر رہ جاتی ہے۔آج کا دور سائنس کا دور ہے۔ اب وہی سماج ترقی کی راہ پر گامزن ہوں گے جو سائنسی طرز فکر کو اپناتے ہوئے اپنی زندگی گزاریں گے۔ سائنسی طرز فکر کی اہمیت کو محسوس کرتے ہوئے ہمارے آئین میںاسے بنیادی فرائض میں شامل کیا گیا ہے۔
دستور ہند کے حصہ چہارم اے کی دفعہ ”51A” میں بیان کردہ بنیادی فرائض میں سے ایک کے مطابق، ہندوستان کے ہر شہری کا فرض ہوگا کہ وہ :
’’سائنسی نقطہ نظر، انسانیت پسندی اور تعلیم حاصل کرنے اور اصلاح کی روح کو فروغ دیں۔‘‘
سائنسی نقطہ نظر کی عدم موجودگی ہی توہم پرستی کو فروغ دیتی ہے۔ توہم پرستی ہمارے معاشرے اور دنیا کے لئے بے حد خطرناک ہے۔لہٰذا ہندوستان کے شہریوں کا بنیادی فرض ہے کہ وہ معاشرے سے توہم پرستی کونکال باہر کریں۔ توہم پرستی وہ تاریکی ہے جو سائنسی نقطہ نظر کی روشنی میں جڑ سے ختم ہوجاتی ہے۔ اکثر دیکھا گیا ہے کہ پڑھے لکھے اور تکنیکی و فنی علم رکھنے والے لوگ بھی توہم پرست ہیں۔یہ اس لئے ممکن ہے کیونکہ سائنسی اور تکنیکی علم کا سائنسی نقطہ نظر کے ساتھ کوئی براہ راست تعلق نہیں ہے۔ سائنسی نقطہ نظر کا میدان بہت وسیع ہے۔لہٰذا سائنس سے زیادہ سائنسی نقطہ نظر کو فروغ دینے کی بات کی جاتی ہے۔
ہندوستانی آئین نے ہم ہندوستانیوں کو اپنی تہذیب و ثقافت ،رسم و رواج اور اپنے اپنے مذاہب کو برقرار رکھنے کی آزادی دی ہوئی ہے۔ لیکن رسم و رواج، روایات اور مذہب کے نام پر توہم پرستی کو فروغ دینا خطرناک ہے۔لہٰذا، یہ ہمارا بنیادی فریضہ ہے کہ ہندوستانی شہری ہونے کے ناطے معاشرے سے توہم پرستی کو دور کریں۔بنا جانچے پرکھے یابغیر کسی آزمائش کے کسی بات کو قبول کرنا یا اس پر یقین کرنا، رسم ورواج، روایات، تہذیب و ثقافت اور مذہب کے نام پر ایسے کام کرنا، جن کو کرنے کی وجہ معلوم نہ ہو ، ایسے کام توہم پرستی کے زمرے میں آتے ہیں۔ وجہ جانتے ہوئے بھی اگر ان اقدامات سے مطلوبہ نتائج نہیں ملتے ہوں، تب بھی ان کاموں کو جاری رکھنا توہم پرستی ہے ۔
سائنسی نقطہ نظر بنیادی طور پر ایک رویہ یا سوچ ہے جس کی بنیادی اساس کسی بھی واقعے کے پس منظر میں موجود کام یا وجہ کو جاننے کا رجحان ہے۔ سائنسی نقطہ نظر ہم میں تفتیش کے رجحان کو فروغ دیتا ہے اور منطقی فیصلہ سازی میں مدد کرتا ہے۔ سائنسی نقطہ نظر کی بنیادی شرط یہ ہے کہ موجودہ شواہد کے مطابق ہی کوئی بات کو تسلیم کی جائے۔ یعنی سائنسی نظریہ ہمارے اندر منطقی سوچ کو فروغ دینے کا نام ہے۔ ہمارے آئین میں سائنسی نقطہ نظر کو بنیادی فرائض کی فہرست میں یہ سوچتے ہوئے شامل کیا گیا ہوگاکہ مستقبل میں سائنسی معلومات اورعلم میں اضافہ کرکے سائنسی نقطہ نظر رکھنے والا معاشرہ تشکیل پائے گا، لیکن موجودہ حقیقت اس سے بالاتر ہے۔
سائنسی نقطہ نظر کا تعلق عقلیت سے ہے۔ سائنسی نظریہ کے مطابق، وہی چیز قابل قبول ہے جو تجربہ اور نتیجہ کے ذریعہ ثابت ہوسکتی ہے، جس میںعلت و معلول کا تعلق قائم کیا جاسکتا ہے۔ بحث، منطق اور تجزیہ سائنسی نقطہ نظر کا ایک اہم حصہ ہے۔ غور طلب ہے کہ سائنسی نقطہ نظر منصفانہ، انسانیت، جمہوریت، مساوات اور آزادی وغیرہ کی تشکیل میں کارگر ثابت ہوتا ہے۔آزادی کے بعد یہ محسوس کیا گیا کہ فرد،معاشرے اور ملک کی ترقی کے لئے سائنسی نقطہ نظر بہت ضروری ہے، لیکن ہمارے ملک کی روایات اور اندھ و شواس اس کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ثابت ہوئے اور ہمارے معاشرے میں سائنسی نقطہ نظر ترقی نہیں کرسکا۔
یہی وجہ ہے کہ 1976 میں آئین کی 42 ویں ترمیم میں، سائنسی نقطہ نظر کی ترقی کو بنیادی فرائض میں بطورایک فرض شامل کیا گیا اور پھر آہستہ آہستہ اس میں کچھ کام سامنے آنا شروع ہوا۔ ہمارے ماہرین تعلیم نے فیصلہ کیا کہ طلباء کے نصابی مواد اوراس کی پیش کش کو سائنسی طریقہ ء کارکے ذریعہ پیش کرنا اور ان کے تجسس کی تسکین کے لئے طلباء کو عملی و تجرباتی طور پر جوابات حاصل کرنے کی ترغیب دینا چاہئے، تبھی طالب علموں میں آہستہ آہستہ سائنسی تفہیم، طریقہء کار اور سائنسی نقطہ نظر تیار کیا جاسکتا ہے۔ ہماری سبھی قومی تعلیمی پالیسیوں میں اس کے کچھ نہ کچھ عناصر شامل ہیں، لیکن یہ نصاب میں شامل نہیں ہے اور سائنسی نقطہ نظر سے وابستہ موضوع و مواد کی کمی طلبہ میں سائنسی نقطہ نظر پیدا کرنے سے قاصر ہے ۔
سائنسی نقطہ نظر سے متعلق مضامین اور طریقوں کی دستیابی کے بعد بھی وہ کون سی وجوہات ہیں ؟جو طلبا میں سائنسی نقطہ نظر کی نشوونما میں رکاوٹ کے ذمہ دار ہیں۔ جدید سائنس کے ظہور کے ساتھ ہی جسمانی اور حیاتیاتی دنیا کے بارے میں انسانوں کے علم میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔ لہٰذا، سائنس نے انسانی تہذیب کو وسیع پیمانے پر متاثر کیا ہے۔ ہم جدید دور کو سائنسی دور سے تعبیر کرتے ہیں۔ سائنس نے انسانوں کی صلاحیتوں اور حدود کو وسعت دی ہے۔ آج، ان گنت آلات اور ڈوائیزہماری روزمرہ کی زندگی کا حصہ بن چکے ہیں۔ لیکن یہ ایسی گڑبڑ ہے کہ ایک طرف ہم سائنس اور ٹکنالوجی کی دریافتوں سے بھر پور فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ لیکن دوسری طرف، برے عمل، خرافات، دقیانوسی تصورات،اندوشواسوں اور منافقتوں نے ہماری زندگی اور معاشرے میں بھی ایک مقام بنا لیا ہے۔ ہمارے معاشرے کے تعلیم یافتہ اور ان پڑھ دونوں طبقات کی اکثریت آبادی بے رحمانہ اور قدامت پسند عقائد کے حامی ہیں۔ آج ہر پڑھا لکھا شخص سائنسی دریافتوں کو جاننا اور سمجھنا چاہتا ہے۔ ہر دن وہ ٹی وی، اخبارات اور بڑے پیمانے پر مواصلات کے دوسرے ذرائع سے نئی خبروں کو جاننے کی کوشش کرتا ہے۔ دوسری طرف، یہ پڑھے لکھے لوگ بھی بد اخلاقی، خرافات، دقیانوسی تصورات، توہمات اور منافقتوں کا شکار ہوجاتے ہیں۔ یہاں تک کہ بہت سارے نام نہاد دانشور اور سائنسدان بھی اس میں شامل ہیں، بڑی حیرت کا مقام ہے! جب سائنس کی پوجا کرنے والے سائنس دانوں کا براہ راست معاشرتی رویہ سائنسی نقطہ نظر کے منافی ہے تو پھر باقی دانشوروں، عام تعلیم یافتہ اور ان پڑھ لوگوں سے کیا امید کی جاسکتی ہے!
سائنس کی اتنی ترقی کے بعد بھی ہم بھوت پریت، جادو ٹونا، دوبارہ جنم لینا، علم نجوم اور دیگر خرافات اور توہم پرستی پر کیوں یقین رکھتے ہیں؟ جب لڑکی پیدا ہوتی ہے تو لوگ خواتین کو کیوں مارتے ہیں؟ جبکہ ہماری کتابوں میں برسوں سے یہ تعلیم دی جارہی ہے کہ ماں کسی لڑکی یا لڑکے کی پیدائش کے لئے ذمہ دار نہیں ہے، راہو کیتو کوئی سیارہ نہیں ہے، گرہن ایک عام فلکیاتی رجحان ہے، بھوت ذہن کے امراض ہیں، علم نجوم اور واستو شاستر سائنس نہیں ہیں، روحانی اور آسمانی طاقت جیسی کوئی چیز نہیں ہے، بلکہ یہ کچھ نجومی، تانترک، سادھو اور منافق بابوں وغیرہ کے کالے کارنامے ہیں۔ اس کے باوجود، کچھ لوگ توہم پرستی، آرتھوڈوکس عقائد اور برائیوں کی حمایت کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ اس کی بنیادی وجہ بغیر کسی ثبوت کے کسی بھی چیز پر یقین کرنے کا رجحان ہے یعنی سائنسی رویہ کی مکمل کمی۔
آج کل بہت سیوڈک سائنسی نظریے زیربحث ہیں، جس میں ایکیوپنکچر، ایکیوپریشر، آیور وید، ماورائے حسی ادراک، مقناطیسی تھراپی، علم نجوم، فینگ شوئی ٹپس، ریکی میڈیسن، وستو شاسترا، پامسٹری، ہومیوپیتھی، ٹیلی پیتی، کوانٹم میڈیسن، سموہن، ایروناٹکس وغیرہ کے نام نمایاں ہیں۔ سائنس ان چھدم سائنسی نظریات میں سے کسی پر عمل نہیں کرتی ہے۔ چھدم سائنسی اصولوں کی وجہ سے، ہمارا قیمتی وقت ضائع ہوتا ہے، معاشی نقصان ہوتا ہے، مفید چیزیں تباہ ہوجاتی ہیں اور مضحکہ خیزی ترغیب پاتی ہے۔ لہذا، اب اس کی حوصلہ افزائی نہیں کی جانی چاہئے۔
موجودہ صورتحال انتہائی تشویش ناک ہے کیونکہ آج توہم پرستی، خرافات اور چھدم سائنسی حقائق بے حد بڑھ رہے ہیں۔ آج، جھوٹے روایات اوررسم ورواج ہماری ضروریات کے مطابق نہیں ہیں، انہیں روایات کے نام پر بھی فروغ دیا جارہا ہے۔ اس طرح کے رسومات پر دوبارہ غور کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمارے ملک میں توہم پرستی دوسرے ممالک کی نسبت کچھ زیادہ ہے، جو سائنسی نقطہ نظر کی عدم موجودگی کی نشاندہی کرتی ہے۔ لہٰذا، سائنسی نقطہ نظر ہندوستان کی فوری ضرورت ہے۔ اگر ہم اپنی روزمرہ کی زندگی میں سائنسی نقطہ نظر رکھتے ہیں تو ہم ذاتی اور معاشرتی واقعات کی عقلی وجوہات کو سمجھ کر عدم تحفظ اور غیر ضروری خوف کے احساس سے نجات حاصل کر سکیں گے۔
آج، بہت سارے سائنسدان ایسے بھی مل جائیں گے جو یہ کہتے ہیں کہ سپر اسٹرنگ تھیوری دس جہتوں کے بارے میں بات کرتی ہے، لہٰذاجدید سائنس کا یہ نظریہ ویدوں کے اعتقاد کی تائید کرتا ہے، جس کے مطابق بھوت پریت وغیرہ پوشیدہ طاقتیںان اضافی جہتوں میں رہتی ہیں۔ آج، ڈاکٹریٹ کی ڈگری رکھنے والے ایسے نام نہاد سائنسدان بھی مل سکتے ہیں جو آپ کو رام راج کی صحیح تاریخ بھی بتانے سے نہیں چوکتے!لہٰذاا، چاہے سائنسداںہوں یا عام انسان، سائنسی نقطہ نظر کی بہت بڑی کمی ہے۔ لیکن بڑا سوال یہ ہے کہ کیوں سائنسداں غیر سائنسی عمل کرتے دکھائی دیتے ہیں؟ اس کاایک جواب یہ ہو سکتاہے کہ سائنسداں بھی، عام لوگوں کی طرح، بچپن میں سکھائے گئے رسم ورواج کے خلاف کھڑے ہونے کی ہمت نہیں رکھتاہے اور کسی پوشیدہ طاقت یا مافوق الفطرت طاقت کا خوف آج بھی باقی ہے۔ آج، ہمیں صرف ان لوگوں کو دانشور یا سائنسداں کہلانے کا حق دینا چاہئے جن کا حقیقت میں سائنسی نقطہ نظر ہو، اس کی بنیاد نہ صرف علم بلکہ سائنسی نقطہ نظر بھی ہونا چاہئے!
قدرتی مظاہر، افعال اور ان کے پیچھے اسباب کی تلاش کے انسانی تجسس نے ایک منظم طریقہ کو جنم دیا جس کو ہم سائنسی طریقہء کار کے نام سے جانتے ہیں۔ آسان الفاظ میں سائنسدان سائنس سے متعلق کام اور تجربات میں جو طریقہ استعمال کرتے ہیں اسے سائنسی طریقہء کار کہتے ہیں۔ سائنسی طریقہ ء کار کی اصولی شرائط یا اکائیاں یہ ہیں: تجسس، مشاہدہ، تجربہ، معیاری اور مقداری سوچ، ریاضی کی ماڈلنگ اور پیش گوئی۔ سائنس کے کسی بھی نظریہ میں ان اقدام یا اکائیوں کی موجودگی لازمی ہے۔ سائنس کا کوئی بھی اصول، اگرچہ درست محسوس ہوتا ہے،لیکن جب ان معیارات پرکھرانہیں اترتا تو خارج کر دیا جاتا ہے۔
سائنسی نقطہ نظر رکھنے والے افراد اپنی بات کو ثابت کرنے کے لئے سائنسی طریقہ اختیار کرتے ہیں۔سائنسی طریقہ نہ صرف سائنس سے متعلق کاموں میں استعمال ہوتا ہے بلکہ یہ ہماری زندگی کے تمام افعال پر لاگو ہوسکتا ہے کیونکہ یہ ہم سب کے تجسس سے پیدا ہوتا ہے۔لہٰذاہر شخص، چاہے وہ سائنسدان ہے یا نہیں، سائنسی نقطہ نظر کا حامل ہوسکتا ہے۔ در حقیقت، سائنسی نقطہ نظر ہماری روزمرہ کی زندگی کے ہر واقعہ کے بارے میں عام فہم کو فروغ دیتا ہے۔ زندگی میں اس رجحان کو اپنانے سے ہی توہم پرستی اور تعصبات سے نجات مل سکتی ہے۔
توہمات اور تعصبات کے مسئلے کو حل کرنے اور طلباء اور اساتذہ میں سائنسی نقطہ نظر پیدا کرنے کے لئے، تجرباتی اور نظریاتی دونوں پہلوؤں پر یکساں زور دینا لازمی ہے۔یہ کام تعلیمی پالیسیوں ، تعلیمی اداروں اور اساتذہ کی ٹریننگ وغیرہ سے شروع کیا جا سکتا ہے۔ کیوں کہ اگر اساتذہ میں سائنسی نقطہ نظر تیار کیا جائے تو آہستہ آہستہ طلباء اور معاشرے میں سائنسی نقطہ نظر کو فروغ دینے کا راستہ کھل جاتا ہے۔ استاد طلباء کا پہلا آئیڈیل ہوتا ہے۔طالب علم کتابوں سے زیادہ اساتذہ کی شخصیت سے متاثر ہوتے ہیں۔ اس لئے اساتذہ میں سائنسی رویہ تیار کرنا اشد ضروری ہے۔ تاکہ وہ اپنی پریشانیوں کا حل نکال سکیں، درس تدریس کو آسان بنا سکیں اور ایسے تدریسی طریقے تیار کریں جو طلبا کی صلاحیتوں کو پروان چڑھاتے ہوئے ایک ترقی یافتہ سماج کی بنیادثابت ہوں۔
٭٭٭

About ڈاکٹر محمد راغب دیشمکھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top
error: Content is protected !!
Visit Us On TwitterVisit Us On Facebook