Home / خبریں / معدومیتں

معدومیتں


٭ فطرت سوہان
 ڈیزاسٹر اینا لسٹ رائیٹرز الرقاء سوریا،شام

معدومیتں

(1)
وہ تنہائی سے باہر اک نیا آغاز کرتا ہے
کہ شاید آخری موقع ملا ہے سانس لینے کا
وہ پہلی بار یکتائی کے چُنگل سے نکل کر سانس لیتا ہے
وہ زندہ ہے مگر شاید وہ اب کچھ بھی نہیں ہے
وہ سب کچھ دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ جو کہ وہ خود سے نہیں ہے
وہ بِن پتلی کی آنکھوں کے گڑھے کا خواب ہے
بے نور آنکھوں کا تماشا ہے
اک ایسا شہر ہے جس کی کلیدیں کھو گئی ہیں
وہ پتھر کی زباں ہے اور یہ بھی جانتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ زندگی خود ایک پتھر ہے
اور اس پتھر کو اب اک اور پتھر کے لیے رستہ بنانا ہے کہ اک دیوار بن جائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ذرا سوچو! اگر پتھر اکٹھے ہو کے خود اک مجمعِ عفریت بن جائیں

(2)
یہ اک دیوار ہے۔۔۔۔۔۔ بس زندگی اور موت کی دیوار
تہی از عکس ہے یا عکس ہائے زندگی پر مضطرب بد خط ہیولا
وہ سارے گو یہاں پر ہیں مگر پیدا نہ ہو پائے
وہ سارے بھی جنھیں نطقِ نمو کُھل کر میسر آگیا ہوگا
انھیں جائے سکونت کی زبان خود سیکھنا ہوگی
انھیں ضبطِ تحیٌر کی زباں خود سیکھنا ہوگی
کہ حسرت ناک ماضی سےجُڑی یادیں
گھروں سے دور رہتوں کے رگ و پے میں سرایت کر گئی ہیں۔۔۔۔۔۔

(3)
خود اپنے لفظ کے پیچھے لپکتی خامشی کو سننا چاہو تو
سبک پتھر کی سرگوشی سنو
اور ان کے روپ میں جو بول کر بھی کچھ نہیں ٹھہرے
مگر آواز جس نے ان کے لہجے میں ہوا سے گفتگو کی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہر روزن میں جھانکے گا
خلاؤں کی خبر دے گا
اور اس دیوار کو سب کچھ بتائے گا
جو اس کے باالمقابل بڑھتی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یقیناَ گفتگو کے واسطے آواز تو ہوگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر اس کی نہیں ہوگی۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ اگرچہ وہ مسلسل بولتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(4)
وہ بہت سارے یہاں پر ہیں
اور ان میں سے۔۔۔۔۔ ہر اک۔۔۔۔ان پتھروں کو گنتے گنتے خود کو پھر سے چھوڑ دیتا ہے۔۔۔۔۔۔۔
کہ جیسے آج پہلا سانس لینا ہو خلا میں۔۔۔۔۔۔۔
اگر یہ لفظ ہے دیوار کا پتھر
تو کوئی لفظ ایسا ہو نہیں سکتا جسے وہ گن نہ پایا ہو ( کسی دیوار کے پتھر کی صورت)
وہ پھر آغاز کرتا ہے
ہر اک لمحے میں پہلا سانس لیتا ہے
کہ گزرا وقت دوبارہ نہیں آتا۔۔۔۔۔۔
اسے لگتا ہے ہر شے میں وہ خود ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گو کہیں پر خود نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنے سانس میں بھی وقت کھینچے ہے
اسے معلوم ہے کہ وہ۔۔۔۔۔۔ اگر زندہ رہے گا تو۔۔۔۔۔۔۔۔ فقط اس میں کہ جو زندہ ہے اور زندہ رہے گا اُس بِنا بھی۔

(5)

وہ چشمِ پیش بیں خود ایک میزانِ کوائف ہے
پسِ ہر حرف گو اک مجمعِ عفریت زندہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر وہ کچھ نہیں ہے تو اسے آغاز کرنے دو
وہیں سے کہ جہاں وہ خود کو پاتا ہے
وہ پھر اپنے سے لوگوں کی طرح جائے سکونت کی زباں خود سیکھتا ہے
اور وہ بھی تو
خود اپنے لفظ سے پہلے کی خاموشی میں زندہ ہے۔۔۔۔۔۔۔

(6)

اگر یاں بات کرنے کا سبب بس بات کرنا ہے
تو ہر اس چیز سے وہ اب تلک جو دیکھ پایا ہے بمسلسل، خودبخود باتیں کرےگا۔۔۔۔۔۔
اگر چہ موت کی ساعت تلک پھیلی ہوئی ا ختر شماری ہی بصارت اور بصیرت چھینتی ہے اور وہ پھر سے گنے جاتا ہے خود کو بھی انھی چھوڑے ہوؤں میں جو کبھی کچھ بھی نہیں تھے۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اب بھی کچھ نہیں ہیں۔۔۔ اس لیے وہ بولتا تو بولتا کیسے کہ یاں راہ مفر کوئی نہیں ہے
آنکھ میں پیدا ہوئے لفظوں کو کہنا ( یا نہ کہنا ) غیر ممکن ہو بھی تو راہِ مفر کوئی نہیں ہے۔۔۔۔۔۔

(7)

وہ اکیلا ہے یہاں ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔
پر ٹھیک پہلا سانس لیتے ہی کہیں کا بھی نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موت کی تکثیر ہے اب عین یکتائی کے جبڑوں میں
مگر الفاظ پھر تعمیر کرتے ہیں کوئی دیوار گویا زندگی کے سنگِ خارا سے
کہ ہر اس چیز سے جس میں وہ خود سے بولتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خود نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اپنے اس طرح ہوتے ہوئے بھی ” وہ” علی الاعلان کہتا ہے کہ ” میں”
گویا وہ خود آغاز کرنا چاہتا ہے دوسروں میں زندہ رہنے کا۔۔۔۔۔( جو خود زندہ نہیں ہیں)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ شہر عفریت ہے
لیکن خود اپنے لفظ کو پامال کر پاتا نہیں ہے
وہ سارے ہیں یہاں پر بھی جو زندہ ہیں فقط دیوار کے پتھر کی صورت
اور ۔۔۔۔۔۔

وہ بھی جو کہ پہلا سانس لے پائے ہوئے ہوں گے
وہ خود ہی سیکھ جائیں گے
کہ اب راہِ مفر کوئی نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔
وہ پھر آغاز کرتا ہے
کہ جیسے آخری موقع ہو بس اک سانس لینے کا ۔۔۔۔۔۔۔
کہ کوئی وقت اب باقی نہیں ہے۔۔۔۔۔۔
اختتامِ وقت کا آغاز ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

About ڈاکٹر محمد راغب دیشمکھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top
error: Content is protected !!
Visit Us On TwitterVisit Us On Facebook