Home / خبریں / قوسِ قزح کی زنجیریں

قوسِ قزح کی زنجیریں

ایم زیڈ کنولؔ ۔لاہور

10698404_511210752315664_1270161800884273003_n

فِطرت کے اُجیارے
رنگوں کی سنگت میں
میں نے لکھنا سیکھا تو
سب طائر میرے لفظوں کو
سُن سُن کر چہکا کرتے تھے
اُن کی اِس چہکار پہ سب
اشجار بھی مہکا کرتے تھے
جھومتے جھومتے خوشیوں کی
بانہوں میں جھولا کرتے تھے
پھر اُن خوشیوں کے آنگن میں
خوشبوئیں یوں درآئیں
کہ ہر سو دھرتی کے مخمل میں
خوشبوئیں ہی اگنے لگیں
سب اپنے پرائے
خوشبو کے دامن میں
بسیرا کرنے لگے
پھر ایسا ہوا
اس خوشبو کو
کچھ قّزاقوں نے لوٹ لیا
وہ بغض وعداوت
مکرورِیا کے
پھول اُگانے آئے تھے
میرے لفظوں نے
اُن پھولوں کو
اِک آن میں آکر نوچ لِیا
اب میں ہوں
اور خوشبوئیں ہیں
اور
اُلفت کے مِضراب پہ گاتی
قوسِ قزح کی ز نجیریں ہیں

About ڈاکٹر محمد راغب دیشمکھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top
error: Content is protected !!
Visit Us On TwitterVisit Us On Facebook